سرورق

 



 

 

ہمارے متعلق
ادارۂ فروغِ قومی زبان (مقتدرہ قومی زبان) کا قیام ۴ اکتوبر ۱۹۷۳ء کو آئین پاکستان ۱۹۷۳ء کے آرٹیکل ۲۵۱ کے تحت عمل میں آیا تاکہ قومی زبان 'اردو' کے بحیثیث سرکاری زبان نفاذ کے سلسلے میں مشکلات کو دور کرے اور اس کے استعمال کو عمل میں لانے کے لیے حکومت کو سفارشات پیش کرے، نیز مختلف علمی، تحقیقی اور تعلیمی اداروں کے مابین اشتراک و تعاون کو فروغ دے کر اردوکےنفاذکوممکن بنائے۔

ادارے کے اغراض و مقاصد
۱۔ پاکستان کی قومی زبان کی حیثیت سے اردو کو فروغ دینے کے ذرائع و وسائل پر غور کرنا؛ نفاذ کے سلسلے میں تمام ضروری انتظامات کرنا اور سرکاری سطح پر قومی زبان کے جلد از جلد نفاذ کے لیے وفاقی حکومت کو سفارشات پیش کرنا۔
۲۔ سرکاری/ نیم سرکاری دفاتر، عدلیہ اور دوسرے شعبوں میں کام کرنے والے ملازمین کی دوران ملازمت تربیت کی غرض سے لغات اور دوسرے پیشہ وارانہ مطالعاتی مواد کی ترتیب وتدوین کے لیے انتظامات کرکے اردو کو پورے ملک میں دفتری زبان کی حیثیث سے رائج کرنے کےعمل کو سہل بنایا۔
۳۔ اردو کی ترقی کے تمام اداروں کے مابین ارتباط قائم کرنا۔
۴۔ سرکاری ملازمتوں کے وفاقی اور صوبائی کمیشنوں کے تعاون سے اردو کو مقابلے کے امتحانات کی زبان کے طور پر اختیار کرنے میں آسانیاں پیدا کرنا۔
۵۔ دیگر ایسی ذمہ داریوں سے عہد برآہونا جو قومی زبان سے متعلق وفاقی حکومت ادارے کو تفویض کرے۔

جملہ حقوق بحق ادارۂ فروغِ قومی زبان محفوظ ہیں © ۲۰۲۲ء